اشیا کی تصویر کشی کرکے جلوس نکالنا

سوال: محترم دین محمدی میں ۱۰ یا ۱۱ تاریخ میں یادیگر تاریخ میں برتن کی اور گھوڑی کی تصویر بنا کر جلوس نکالنا کیا سنت حسن اور سنت حسین ہے کیا یہ قول وعمل اہل سنت والجماعت کے لئے جائز ہے اس مقصد میں محمد کی شریعت کیا حکم دیتی ہے۔

Staff April 14, 2015

جواب: شریعت محمدی میں برتن یا گھوڑے کی تصویر بنا کر نکلنا حرام ہے۔ حدیث شریف میں ہے کہ جو کوئی تصویر بناتا ہے اس کو قیامت کے دن سخت عذاب ہوگا اور اس سے اس بات کو کہا جائے گا کہ اس میںروح ڈال کر زندہ کر حالانکہ وہ اسے زندہ نہیں کرسکتا اور اس میں روح نہ ڈال سکے گا۔ ایک حدیث کا ٹکڑا ہے ومن صور صورۃ عذب وکلف ان ینفخ فیھا ولیس بنافخ (رواہ البخاری: مشکوٰۃ شریف ص: ۲۸۶)
اور ایک حدیث شریف میں ہے کہ تصویر بنانے والوں کو قیامت میں سب سے زیادہ سخت عذاب دیا جائے گا۔ حدیث ہے عن ابن عباس قال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ان اشد الناس عذابا یوم القیامۃ من قتل نبیا او قتلہ نبی او قتل احد والدیہ والمصورون وعالم لم ینتفع بعلمہ (مشکوٰۃ شریف ص:۲۸۷) بہر حال جس کام میں شریعت مطہرہ کی نظر میں اتنی قباحت ہو اور اس کو کرنے والوں کے لئے اتنی وعید اور عذاب ہوتو وہ کام سنت حسن اور سنت حسین کیسے ہوسکتا ہے بلکہ خیال رکھنا بھی حرام ہے۔

#1

This question is now closed