غیرمسلم کے جنازہ میں شرکت

سوال: زید نے اپنے دوست رام غیر مسلم کی تجہیز وتکفین میں مدد کی اور اس کے جلانے میں لکڑی وغیرہ کا انتظام بھی کیا نیز از شروع تا آخر اس غیر مسلم کی تجہیز وتکفین میں شریک رہا تو از روئے شرع زید کا یہ عمل کیسا ہے؟

Staff April 14, 2015

جواب: مسلمانوں کا کفار کی عبادت گاہوں میں جاکر ان کے مذہبی اعمال میں شریک ہونا سخت خطرناک ہے کیونکہ اس سے ان کے اعمال دینیہ کی تعظیم اور ان کے مذہبی امور کے ساتھ پسندیدگی اور رضا معلوم ہوتی ہے اور یہ باتیں شریعت مطہرہ اور غیرت اسلامی کے خلاف ہیں لیکن وہ امور جو معاشرت سے تعلق رکھتے ہیں ان میں مسلمان کا اپنے مشرک پڑوسی سے حسن سلوک اور اس کی تعزیت اور رشتہ دار کافر کے جنازہ کی شرکت یا کافر پڑوسی کے جنازہ کے ساتھ جانا یہ سب مباح ہے بشرطیکہ اس مسلمان سے کوئی ایسا کام سرزد نہ ہو جس سے ان کے دین کے ساتھ اس کی پسندیدگی ظاہر ہو اور ان کے طریقہ کے ساتھ اس کی رضا معلوم ہو اور نعش کفار کے جلانے کے لئے لکڑی وغیرہ دینا مناسب نہیں۔

#1

This question is now closed